11 4

آئی سی سی ایونٹس کی میزبانی کرنے پر بھی پابندی لگا دی جائے گی


دبئی(ویب ڈیسک ) بھارت سے کرکٹ ورلڈکپ 2023 کی میزبانی چھن جانے کا امکان، اگلے 10 سال کیلئے کسی بھی آئی سی سی ایونٹس کی میزبانی کرنے پر بھی پابندی لگا دی جائے گی۔ تفصیلات کے مطابق بھارتی کرکٹ بورڈ اور آئی سی سی کے درمیان تنازعہ پیدا ہو گیا جس کے باعث بھارت سےناصرف 2023 کرکٹ ورلڈکپ کی میزبانی چھن سکتی ہے، بلکہ اگلے 10 سال کیلئے آئی سی سی ایونٹس کی میزبانی پر پابندی بھی لگنے کا امکان ہے۔بتایا گیا ہے کہ آئی سی سی قوانین کے تحت جب بھی کسی ملک میں آئی سی سی ایونٹس کا انعقاد کیا جاتا ہے، تو اس ملک کی حکومت آئی سی سی کو باقاعدہ ٹیکس چھوٹ دیتی ہے۔ تاہم بھارت کی حکومت ایسا کرنے کیلئے تیار نہیں۔ اس تمام صورتحال میں آئی سی سی نے واضح کر دیا ہے کہ اگر بی سی سی آئی اپنے حکومت سے آئی سی سی ایونٹس کیلئے ٹیکس چھوٹ کی سہولت حاصل نہ کر سکا، تو اس صورت میں ناصرف 2023 ورلڈکپ کی میزبانی کسی اور ملک کو دے دی جائے گی، بلکہ اس کے علاوہ اگلے 10 سال کیلئے بھی بھارت کسی آئی سی سی ایونٹ کی میزبانی نہیں کر سکے گا۔دوسری جانب بتایا گیا ہے کہ انٹرنیشنل کرکٹ کونسل(آئی سی سی نے) ”مزید مال“ کمانے کا منصوبہ بنا لیا، نئے دورانیے کے مجوزہ ایونٹس میں ٹی 20 چیمپئنز کپ کو بھی شامل کرلیا گیا جب کہ 10 ٹاپ ٹیموں کے درمیان ہر 4 برس بعد 48 میچز کا ایونٹ ہوگا۔انٹرنیشنل کرکٹ کونسل نے 2023ء سے 2031ء تک کے اپنے اگلے نشریاتی دورانیہ میں ٹوئنٹی 20 اور ون ڈے فارمیٹ کے 2 نئے ایونٹس چیمپئنز کپ کے نام سے شروع کرنے کا فیصلہ کیا ہے، اس حوالے سے سامنے آنیوالی تفصیلات میں انکشاف کیا گیاکہ ٹی 20 چیمپئنز کپ 2024ء اور 2028ء میں منعقد کیا جائے گا، ون ڈے چیمپئنز کپ 2025ء اور 2029ء میں منعقد ہوں گے۔ان کے ساتھ ٹی 20 ورلڈ کپ کا 2026ء اور 2030ء میں انعقاد ہوگا،ون ڈے ورلڈ کپ 2027ء اور 2031ء میں منعقد کیے جائیں گے۔ون ڈے چیمپئنز کپ دراصل سابقہ چیمپئنز ٹرافی کی طرز پر کھیلا جائے گا جس میں صرف 6 ٹاپ ٹیموں کے درمیان 16 میچز ہوں گے،ٹی 20 چیمپئنز کپ میں ٹاپ 10 ٹیموں کے درمیان 48 میچز کھلانے کا ارادہ ہے جو گذشتہ ایک روزہ ورلڈ کپ کے میچز کے برابر ہیں۔ممبر ممالک کو ہدایت کی گئی کہ2023ء سے 2031ء کے دوران شیڈول ان ایونٹس میں سے کسی کی میزبانی میں دلچسپی رکھتے ہوں تو 15 مارچ سے پہلے باضابطہ طور پر آگاہ کردیا جائے۔یاد رہے کہ آئی سی سی اور اس کے چیف ایگزیکٹیو مانو ساہنی پہلے ہی واضح کرچکے ہیں کہ گورننگ باڈی کو سال میں کم سے کم ایک عالمی ایونٹ کا انعقاد ضرور کرنا چاہیے۔ اسی طرح اگلے دورانیے میں 2025ء، 2027ء، 2029ء اور 2031ء میں ٹیسٹ چیمپئن شپ کے فائنلز بھی ہوں گے۔ سفید بال کے دونوں فارمیٹس ورلڈ کپ کے علاوہ ویمنز چیمپئنز کپ بھی منعقد کیے جائیں گے تاہم ان میں ٹیموں اور میچز کی تعداد کم ہوگی۔



اس وقت سب سے زیادہ مقبول خبریں


تازہ ترین خبریں
16 8
پیپلز پارٹی کا (ق) لیگ کے حوالے سے بڑا فیصلہ
15 10
پہلا روزہ اور عید کب ہوگی
14 11
2023ء میں پاکستان کا وزیر اعظم کون ہوگا؟ بڑی پیشگوئی
13 12
تنخواہوں میں بڑے اضافے کی تیاریاں
12 11
(ن) لیگ کا بلدیاتی اداروں پر کنٹرول بحال
11 11
بلاول بھٹو کو وزیر اعظم بنوانے کی کوششیں تیز

تازہ ترین ویڈیو
23
امت مسلمہ کے ہیرو صلاح الدین ایوبی کے قول کے پیچھے چھپی سچی کہانی
27 2
یہ وہ جھوٹ ہے جوہر لڑکی ضرور بولتی ہے
2
کرونا وبا کب اور کیسے ختم ہو گی ؟ 1400 سال پہلے حضور اکرم ﷺ کی نشاندہی ، جان کر آپ پھولے نہ سمائیں گے
4 7
جھگڑالو بیوی نعمت خدا وندی مگر کیسے
3 9
کیسے لڑکیوں کو خواب دکھا کر تباہ کیا جاتا ہے ایک سچا واقعہ
52394
الطاف حسین نے آخری وقت میں ہندو مذہب کیوں اختیار کیا،کرونا سے ڈر کر یا ہندووں کی محبت میں

دلچسپ و عجیب
15 7
وہ سربراہ جسے دفنانے کیلئے کئی بار قبر کھودی گئی مگر اندر ایک کالاسانپ نکلا
9 1
کرونا وائرس کی وبا کے دوران میاں بیوی ازدواجی تعلقات قائم رکھ سکتے ہیں ؟
20 8
دریا ’’نیل‘‘ کے نیچے زیر زمین کونسا دریا بہتا ہے
Copyright © 2017 insafnews.pk All Rights Reserved
About Us | Privacy Policy | Discaminer | Contact Us