9 5

برطانیہ,نیا امیگریشن سسٹم جاری کرنے کا اعلان


لندن (این این آئی)برطانیہ نے یورپی یونین سے علیحدگی کے بعد کے لیے پوائنٹس پر مشتمل نیا امیگریشن سسٹم جاری کرنے کا اعلان کیا ہے جس کے تحت یورپ سے سستی لیبر پر انحصار کو کم کرنے کی پالیسی اپنائی جائے گی۔نئے امیگریشن منصوبے کے تحت برطانیہ ویزوں کے لیے دنیا بھر سے ہنرمند افراد کو ترجیح دے گا۔ خیال رہے کہ 2016 میں یورپی یونین سے علیحدگی کے لیے ہونے والے ریفرنڈم میں یورپ سے بڑی تعداد میں برطانیہ آنے والے تارکین وطن کے ایشو نے اہم کردار ادا کیا تھا۔ حکومت کا پالیسی دستاویز میں کہنا تھا کہ ہمیںیورپ سے سستی لیبر پر انحصار کرنے کے بجائے ٹیکنالوجی پر سرمایہ کاری اور آٹومیشن پر توجہ دینے کی ضرورت ہے۔برطانوی خبر رساں ادارے روئٹرز کے مطابق امیگریشن کا نیا نظام یکم جنوری 2021 سے لاگو ہوگا۔ نئے نظام کے تحت مخصوص ہنر، قابلیت، تنخواہ یا پیشے کے لیے پوائنٹس دیے جائیں گے اور ویزا ان ملے گا جن کے پاس کافی پوائنٹس ہوں گے۔ اس میں یورپی اور غیر یورپی شہریوں میں کوئی تفریق نہیں برتی جائے گی۔نئے نظام کے تحت برطانیہ میں کاروبار کے لیے ضوابط میں بہت زیادہ تبدیلیاں لائی جائیں گی۔اس میں ملازمت دینے والوں سے کہا گیا ہے کہ وہ یورپ سے ’سستی مزدوری‘ پر انحصار نہ کریں۔ خیال رہے کہ 2004 میں سابق کمیونسٹ ریاستوں کی یورپی یونین میں شمولیت کے بعد تارکین وطن کی بڑی تعداد برطانیہ آئی اور کاروبار کو سستی لیبر مہیا ہوئی۔برطانیہ کے وزیر داخلہ پریٹی پٹیل کے مطابق نئے ’پوائنٹس بیسڈ سسٹم‘ میں اس بات کو یقینی بنایا گیا ہے کہ برطانیہ آنے کے لیے ویزا ان افراد کو ملے جن کے پاس ملک اور ملک کی معیشت کو درکار مہارت ہو۔ بعض کاروباری گروپوں کا کہنا ہے کہ بہت سی کاروباری فرم تارکین وطن مزدوروں پر انحصار کرتے ہیں اور انہوں نے خبردار کیا ہے کہ فصلیں اگانے، مریضوں کی تیمارداری اور گھریلو ملازمین کے لیے ملک میں کارکن ناکافی ہیں۔وزارت داخلہ کے مطابق 31 دسمبر 2020 کے بعد جب برطانیہ اور یورپی یونین کی آزادانہ نقل و حرکت ختم ہو جائے گی تو یورپی یونین یا غیر یورپی ممالک سے برطانیہ آنے والے شہریوں کے ساتھ یکساں انداز میں پیش آیا جائے گا۔ برطانوی محکمہ داخلہ کے مطابق مائیگریشن ایڈوائزری کمیٹی ( ایم اے سی) کی جانب سے کم سے کم تنخواہ کے حوالے سے دیے گئے مشورے پر عمل درآمد کیا جائے گا۔ خیال رہے کہ ایم اے سی ایک آزاد باڈی ہے جو حکومت کو مشورتے دیتی ہے۔ ایم اے سی نے ہنر مند تارکین وطن کی کم سے کم تنخواہ 30 ہزار پاؤنڈز سے کم کر کے 26 ہزار 600 پاؤنڈز کرنے کا مشورہ دیا تھا۔ہنر مند تارکین وطن کو برطانوی ویزے کے حصول کے لیے مقرر کردہ معیار پر پورا اترنا ہوگا جس میں انگریزی بولنے کی صلاحیت اور ملازمت کے لیے آفر لیٹر کی موجودگی بھی شامل ہیں۔محکمہ داخلہ کا کہنا ہے کہ اس نظام کے تحت کم ہنر مند افراد کے برطانیہ میں داخلے کے لیے کوئی مخصوص اینٹری روٹ نہیں ہوگا۔ حکومت توقع کر رہی ہے کہ یہ عمل تارکین وطن کی تعداد کو کم کرنے میں مددگار ثابت ہوگی۔حکومت کا پالیسی دستاویز میں کہنا تھا کہ ہمیں یورپ سے سستی لیبر پر انحصار کرنے کے بجائے ٹیکنالوجی پر سرمایہ کاری اور آٹومیشن پر توجہ دینے کی ضرورت ہے۔



اس وقت سب سے زیادہ مقبول خبریں


تازہ ترین خبریں
16 8
پیپلز پارٹی کا (ق) لیگ کے حوالے سے بڑا فیصلہ
15 10
پہلا روزہ اور عید کب ہوگی
14 11
2023ء میں پاکستان کا وزیر اعظم کون ہوگا؟ بڑی پیشگوئی
13 12
تنخواہوں میں بڑے اضافے کی تیاریاں
12 11
(ن) لیگ کا بلدیاتی اداروں پر کنٹرول بحال
11 11
بلاول بھٹو کو وزیر اعظم بنوانے کی کوششیں تیز

تازہ ترین ویڈیو
23
امت مسلمہ کے ہیرو صلاح الدین ایوبی کے قول کے پیچھے چھپی سچی کہانی
27 2
یہ وہ جھوٹ ہے جوہر لڑکی ضرور بولتی ہے
2
کرونا وبا کب اور کیسے ختم ہو گی ؟ 1400 سال پہلے حضور اکرم ﷺ کی نشاندہی ، جان کر آپ پھولے نہ سمائیں گے
4 7
جھگڑالو بیوی نعمت خدا وندی مگر کیسے
3 9
کیسے لڑکیوں کو خواب دکھا کر تباہ کیا جاتا ہے ایک سچا واقعہ
52394
الطاف حسین نے آخری وقت میں ہندو مذہب کیوں اختیار کیا،کرونا سے ڈر کر یا ہندووں کی محبت میں

دلچسپ و عجیب
15 7
وہ سربراہ جسے دفنانے کیلئے کئی بار قبر کھودی گئی مگر اندر ایک کالاسانپ نکلا
9 1
کرونا وائرس کی وبا کے دوران میاں بیوی ازدواجی تعلقات قائم رکھ سکتے ہیں ؟
20 8
دریا ’’نیل‘‘ کے نیچے زیر زمین کونسا دریا بہتا ہے
Copyright © 2017 insafnews.pk All Rights Reserved
About Us | Privacy Policy | Discaminer | Contact Us