5

عرب ریاستیں قرض لینے پر مجبور


ریاض (ویب ڈیسک )کورونا وائرس کی وبا نے جہاں دنیا بھر میں صحت کے حوالے سے ہنگامی حالت پیدا کی وہیں اس کے اثرات سے معیشتیں بھی لڑکھڑا کر رہ گئی ہیں، حتیٰ کہ وہ عرب ممالک جنھیں ہمیشہ امیر ریاستوں کے طور پر دیکھا جاتا تھا، اب قرض مانگنے کی نہج پر آ پہنچے ہیں۔دنیا بھر میں لاک ڈاؤن کے باعث تیل کی کھپت میں کمی اور عالمی منڈیوں میں اس کی قیمت میں گراوٹ نے عرب ریاستوں کے سب سے بڑے ذریعہ آمدن کو بہت نقصان پہنچایا ہے۔خبر رساں ادارے روئٹرز کی ایک رپورٹ کے

مطابق کویت میں ایسی قانون سازی کی جا رہی ہے کہ وہ قرضے کے لیے بین الاقوامی منڈی کا در کھٹکھٹا سکے۔کویت میں قانون ساز چاہتے ہیں کہ حکومت فنڈز اور ادائیگیوں کے معاملے میں زیادہ شفافیت کا مظاہرہ کرے۔ ایک حکومتی اہلکار نے نام ظاہر نہ کرنے کی شرط پر خبر رساں ادارے روئٹرز کو بتایا کہ ’اگر قرضوں سے متعلق قانون منظور نہیں ہوتا تو حکومت کو صحیح معنوں میں ہر معاملے میں بحران کا سامنا کرنا پڑ سکتا ہے۔‘اس مجوزہ قانون پر کویت کی پارلیمانی کمیٹی میں بحث بھی ہوئی ہے اور اس کے تحت کویت 30 برس میں 20 ارب ڈالر تک قرض لے سکتا ہے۔گذشتہ چند برسوں میں دیگر خلیجی ممالک بھی قرض کے لیے بین الاقومی منڈیوں میں جا چکے ہیں خاص طور پر جب تیل کی قیمتوں میں کمی اور وبا کے باعث عالمی سطی پر تیل کی طلب میں کمی واقع ہوئی۔سعودی عرب بھی اسی کشتی کا سوارسعودی عرب بھی کبھی ٹیکس سے پاک ہونے کے لیے مشہور تھا۔ لیکن وہاں ویلیو ایڈڈ ٹیکس کو پانچ فیصد سے بڑھا کر 15 فیصد کرنے کا اعلان کیا گیا ہے اور ماہانہ رہائشی سبسڈی بھی منسوخ کر دی گئی ہے۔یہ فیصلہ عالمی سطح پر تیل کی قیمتوں میں کمی کے بعد حکومتی محصولات

میں 22 فیصد کی کمی کے بعد کیا گیا ہے۔ اس کے ساتھ ساتھ ہمسایہ ملک یمن میں جنگ نے پانچ سال سے زیادہ عرصے سے سعودی عرب کے خزانے کو بغیر کسی خاص فائدے کے نچوڑا ہے۔سعودی عرب کے پاس پبلک انویسٹمنٹ فنڈ کے نام سے تقریباً 320 ارب ڈالر مالیت کا ساورین ویلتھ فنڈ موجود ہے جس پر وہ اب انحصار کرے گا۔اس کے پاس سرکاری ملکیت والی تیل کمپنی آرامکو بھی ہے جس کی قیمت گذشتہ سال 17 کھرب ڈالر لگائی گئی تھی جو کہ اُس وقت گوگل اور ایمیزون کی مشترکہ قیمت کے برابر تھی۔ حال ہی میں کمپنی کا صرف ڈیڑھ فیصد حصہ فروخت کر کے سعودی عرب نے شیئر لسٹنگ کی تاریخ میں سب سے بڑا فنڈ، 25 ارب ڈالر، اکٹھا کیا تھا۔کووڈ 19 وائرس اور تیل کی قیمتوں میں کمی کی وجہ سے سعودی عرب کے مرکزی بینک کو تقریباً 26 ارب ڈالر کا نقصان محض مارچ کے مہینے میں اٹھانا پڑا۔قرض کا کمبل اور بدامنی کا خطرہسنیئر صحافی اور تجزیہ کار راشد حسین کا کہتے ہیں کہ یہ بات ڈھکی چھپی نہیں کہ عرب ممالک کی آمدن کا زیادہ تر انحصار تیل پر ہوتا ہے لیکن اس وقت تیل ماضی کے مقابلے میں تقریباً نصف قیمت پر آ چکا ہے اور اس میں مزید کمی کا امکان ہے۔وہ کہتے ہیں ’کویت اور سعودی عرب جیسے ممالک میں جہاں بادشاہت ہے وہاں اقتدار کی بقا اس وعدے پر ہے کہ وہ عوام کی ضرورتوں کو پورا کریں گے۔ لیکن اس وقت تیل کی قیمتوں کے حالات کو دیکھا جائے تو یہ وعدہ زیادہ دیر تک وفا ہوتا دکھائی نہیں دیتا۔‘ان کا کہنا تھا کہ سعودی عرب کی مثال لیں تو اس کا سالانہ خرچ 300 ارب ڈالر کے قریب ہے، جبکہ آمدن میں تیل سے 150 ارب ڈالر کے قریب ہے، اقاموں اور ٹیکسز سے 20 ارب ڈالر تک آتا ہے، اور حج سے بھی 10 یا 20 ارب ڈالر حاصل ہو جاتے ہیں، جو اس سال حاصل نہیں ہوں گے۔‘’اب 150 ارب ڈالر آمدن سے 300 ارب ڈالر کا خرچ پورا کرنا ممکن نہیں اور انھیں لامحالہ اپنے ریزرو فنڈز استعمال کرنا پڑیں گے جو کہ چار سال سے زیادہ کے لیے شاید نہ ہوں۔ اس بڑھتے ہوئے بجٹ خسارے کو پورا کرنے کے لیے انھیں بھی قرض لینا پڑے گا۔‘تاہم انھوں نے خبر دار کیا کہ ’اگر وہ ایسا نہیں کرتے تو عوام کا معیار زندگی نیچے آئے گا جو لا محالہ سماجی بدامنی کا خطرہ پیدا کرے گا۔‘کویت قرض لینے کی تیاری تو کر رہا ہے لیکن صحافی راشد حسین کہتے ہیں کہ قرض کے معاملات نہ ختم ہونے والا ایک سلسلہ ہیں کیونکہ بیشتر اوقات ان پر عائد سود اسے ناقابل واپسی بنا دیتا ہے۔ان کا کہنا تھا کہ ’آج اگر قرض کی رقم جی ڈی پی کا ایک فیصد ہے تو کل یہ دو اور پھر دس فیصد اور بعض معاملات میں تو 100 فیصد تک چلا جاتا ہے۔



اس وقت سب سے زیادہ مقبول خبریں


تازہ ترین خبریں
16 8
پیپلز پارٹی کا (ق) لیگ کے حوالے سے بڑا فیصلہ
15 10
پہلا روزہ اور عید کب ہوگی
14 11
2023ء میں پاکستان کا وزیر اعظم کون ہوگا؟ بڑی پیشگوئی
13 12
تنخواہوں میں بڑے اضافے کی تیاریاں
12 11
(ن) لیگ کا بلدیاتی اداروں پر کنٹرول بحال
11 11
بلاول بھٹو کو وزیر اعظم بنوانے کی کوششیں تیز

تازہ ترین ویڈیو
23
امت مسلمہ کے ہیرو صلاح الدین ایوبی کے قول کے پیچھے چھپی سچی کہانی
27 2
یہ وہ جھوٹ ہے جوہر لڑکی ضرور بولتی ہے
2
کرونا وبا کب اور کیسے ختم ہو گی ؟ 1400 سال پہلے حضور اکرم ﷺ کی نشاندہی ، جان کر آپ پھولے نہ سمائیں گے
4 7
جھگڑالو بیوی نعمت خدا وندی مگر کیسے
3 9
کیسے لڑکیوں کو خواب دکھا کر تباہ کیا جاتا ہے ایک سچا واقعہ
52394
الطاف حسین نے آخری وقت میں ہندو مذہب کیوں اختیار کیا،کرونا سے ڈر کر یا ہندووں کی محبت میں

دلچسپ و عجیب
15 7
وہ سربراہ جسے دفنانے کیلئے کئی بار قبر کھودی گئی مگر اندر ایک کالاسانپ نکلا
9 1
کرونا وائرس کی وبا کے دوران میاں بیوی ازدواجی تعلقات قائم رکھ سکتے ہیں ؟
20 8
دریا ’’نیل‘‘ کے نیچے زیر زمین کونسا دریا بہتا ہے
Copyright © 2017 insafnews.pk All Rights Reserved
About Us | Privacy Policy | Discaminer | Contact Us