5

(ن) اور پیپلز پارٹی ملکر عید الاضحی کے فوری بعد کیاکرنے جارہے ہیں


لاہور( این این آئی )پاکستان مسلم لیگ (ن) اور پیپلز پارٹی نے عید الاضحی کے فوری بعد آل پارٹیز کانفرنس کے انعقاد پر اتفاق کرتے ہوئے آئندہ کی متفقہ حکمت عملی اور اے پی سی کے ایجنڈے کی تیار ی کیلئے تمام اپوزیشن جماعتوں پر مشتمل کوارڈی نیشن کمیٹی بنانے کا بھی فیصلہ کیا ہے جوتشکیل کے بعد جلد اپنا کام شروع کردے گی ۔ مسلم لیگ (ن) اور پیپلز پارٹی نے کہا ہے کہ موجودہ حکومت کے قائم رہنے سے پاکستان کوداخلی اور خارجی خطرات کا سامنا رہے گا ،کورونا وائرس کی وباء حکومت کے لئے لائف لائن اورآکسیجن ثابت ہوئی ہے وگرنہ یہ حکومت اپریل ، مئی تک اپنے

بوجھ سے گرنے کیلئے تیار تھی ۔پاکستان مسلم لیگ (ن) کے صدر محمد شہباز شریف کی ہدایت پر سردار ایاز صادق ،احسن اقبال اور سردار ایاز صادق پر مشتمل تین رکنی وفد نے بلاول ہائوس لاہور میں پیپلز پارٹی کے چیئرمین بلاول بھٹو زرداری سے ملاقات کی ۔ ملاقات میں پیپلز پارٹی کی جانب سے راجہ پرویز اشرف، قمر زمان کائرہ، چوہدری منظور اور سید حسن مرتضیٰ شریک ہوئے ۔ ملاقات میں مسلم لیگ (ن) نے بلاول بھٹو کو شہباز شریف کی طرف سے ان کے والد کی صحتیابی کیلئے نیک خواہشات کا پیغام پہنچایا جبکہ بلاول بھٹو نے بھی شہباز شریف کی صحت بارے آگاہی حاصل کرتے ہوئے نیک خواہشات کا اظہار کیا ۔ ملاقات میں ملک کی مجموعی سیاسی صورتحال ،انتقامی کاروائیوں اور نیب قوانین میں ممکنہ ترامیم کے امور سمیت خصوصی طور پر آل پارٹیز کانفرنس کے انعقاد کے حوالے سے تفصیلی تبادلہ خیال کیا گیا اور طے پایا کہ عید الاضحی کے فوری بعد آل پارٹیز کانفرنس کا انعقاد کیا جائے گا تاہم اس کیلئے تمام اپوزیشن جماعتوں سے رابطوں پر اتفاق کیا گیا ۔ ملاقات میں اپوزیشن جماعتوں کی کوارڈی نیشن کمیٹی کے قیام کا فیصلہ کرتے ہوئے کہا گیا کہ مذکورہ کمیٹی آئندہ کی حکمت عملی اور اے پی سی کا ایجنڈا بھی طے مرتب کرے گی ۔ ملاقات کے بعد قمر زمان کائرہ اور خواجہ سعد رفیق کے ہمراہ مشترکہ پریس کانفرنس کرتے ہوئے احسن اقبال نے کہا کہ پیپلز پارٹی کی قیادت سے ملک کی مجموعی صورتحال اور اے پی سی کے انعقاد کے حوالے سے تفصیلی بات چیت ہوئی ہے اور عید الاضحی کے فوری بعد اے پی سی کے انعقاد پر اتفاق ہوا ہے ۔ اس سلسلہ میں کوارڈی نیشن کمیٹی بنائی جائے گی جس میں تمام اپوزیشن جماعتوں کے نمائندے شامل ہوں گے جو متفقہ طور پر فیصلے کرے گی ۔ احسن اقبال نے کہا کہ اس حکومت نے عوام کی زندگیوں میں

مہنگائی بے روزگاری کا زہر گھول دیا ہے، اس حکومت نے مقبوضہ کشمیر کے مسلمانوں کو بھی ان کے حال پر چھوڑ دیاہے،آزادی اظہار رائے کا گلا گھونٹنے کی کوشش کی گئی ہے، 72 برس کے بعد پاکستان اس بات کا متحمل نہیں ہوسکتا کہ اسے کسی نئے فاشسٹ ایجنڈے کی تجربہ گاہ بنایا جاسکے ۔ پاکستان آئین کے علاوہ کسی اور راستے پر چلنے کا متحمل نہیں ہو سکتا ،ماضی میں ایسے تجربات نے ملک کو نقصان پہنچایا ہے، ملکی معیشت حکومت کی نااہلی، ناتجربہ کاری اور نالائقی سے تباہ ہوگئی ہے، 21 ویں صدی میں کوئی ریاست اس تباہ حال معیشت کے ساتھ اپنا وجود برقرار نہیں رکھ سکتی۔انہوں نے کہا کہ عوام کو بہتر معیار زندگی دینا تو دور کی بات روز بروز عوام کا معیار زندگی انحطاط کا شکار ہے،لوگ گاڑیوں سے موٹربائیک پر آرہے ہیں۔ موٹر بائیک والا سائیکل جبکہ سائیکل ولا پیدل سفر کرنے پر مجبور ہورہا ہے، لوگوں کے لیے بچوں کو تعلیم دلانا، ان کے اخراجات اٹھانا ناممکن ہوگیا ہے، مزدور کسان، ڈگری یافتہ نوجوان پریشان ہیں اس لیے اپوزیشن سمجھتی ہے کہ اس حکومت کے قائم رہنے سے پاکستان کو شدید داخلی اور خارجی خطرات کا سامنا رہے گا۔خطے کی صورتحال کے باعث ہمیں اندرونی اتحاد، داخلی یکجہتی کی ضرورت ہے لیکن حکومت کا صرف انتقامی ایجنڈا ہے جس کے ساتھ یہ ملک کا شیرازہ بکھیر رہی ہے۔ چنانچہ اپوزیشن کی دونوں بڑی جماعتیں اس بات پر متفق ہیں کہ اس نااہل حکومت سے نجات حاصل کرنا پاکستان کے 22 کروڑ عوام کی امنگوں کی ترجمانی ہے۔انہوں نے کہا کہ اگر کورونا کی وبا نہ آتی تو حکومت مارچ ، اپریل یا مئی تک اپنے بوجھ تلے دبنے کیلئے تیار تھی۔ کورونا وائرس کی وجہ سے موجودہ حکومت کو لائف لائن اور آکسیجن ملی ہے۔احسن اقبال نے کہا کہ ایسا قانون بنایا جا رہا ہے جو نیب کا باپ نہیں دادا ہے، لیکن ہم نے حکومت کے کلہاڑوں کا مقابلہ کیا ہے۔ فیٹف کے جو کمپلائنس ہیں ہم ان سے متفق ہیں لیکن حکومت فیٹف کی آڑ میں ایسا قانون بنانے جارہی ہے جس کے تحت کسی بھی شخص کو بغیر ریمانڈ کے 90دن تحویل میں رکھا جا سکے گا جبکہ مزید 90کا فیصلہ وفاقی یا صوبائی سیکرٹری داخلہ کی صوابدید ہوگا،کسی بھی تاجر یا صحافی پر 100ڈالر پر ہنڈی حوالہ کے نام پر اقتصادی دہشتگردی کا پرچہ دے کر اسے جیل کی کال کوٹھری میں ڈالا جا سکے گا، اس طرح کا قانون تو افغانستان میں بھی نافذ نہیں۔ یہ فیٹف کو بدنام کر رہے ہیں، اقوام متحدہ کو بھی بدنام کر رہے ہیںانٹرنیشنل کمیونٹی کا نام لے کر کالا قانون مسلط کئے جا رہے ہیں شخصی آزادیاں، آزادی رائے اور سیاسی حقوق سلب کئے جا رہے ہیں۔ احسن اقبال نے مریم نوز کی خاموشی کے حوالے سے سوال کے جواب میں کہا کہ وہ خاموش نہیں ہیں بلکہ ان کا ملک میں موبلائزیشن کے لئے جو کردار ہوگا وہ کسی اور کا نہیں ہو سکتا ،جب وقت آئے گا مریم نواز ضرور کردار ادا کریں گی ۔



اس وقت سب سے زیادہ مقبول خبریں


تازہ ترین خبریں
19
پی ٹی آئی نے بلوچستان حکومت سے علیحدگی پر غور شروع کر دیا
18
وزیر اعظم ہاؤس بلا کر عمران خان مجھے کیا کہتے رہے؟ بشیر میمن کے تہلکہ خیز انکشافات
17
بجلی سستی کیے جانے کا امکان
16
نواز شریف کے 3 قریبی ساتھی کس اعلیٰ شخصیت سے ملے؟ بڑی خبر
15
عید کے بعد کیا کرنا ہے؟ حکمت عملی تیار
14
الطاف حسین نے آخری وقت میں ہندو مذہب کیوں اختیار کیا

تازہ ترین ویڈیو
23
امت مسلمہ کے ہیرو صلاح الدین ایوبی کے قول کے پیچھے چھپی سچی کہانی
27 2
یہ وہ جھوٹ ہے جوہر لڑکی ضرور بولتی ہے
2
کرونا وبا کب اور کیسے ختم ہو گی ؟ 1400 سال پہلے حضور اکرم ﷺ کی نشاندہی ، جان کر آپ پھولے نہ سمائیں گے
4 7
جھگڑالو بیوی نعمت خدا وندی مگر کیسے
3 9
کیسے لڑکیوں کو خواب دکھا کر تباہ کیا جاتا ہے ایک سچا واقعہ
52394
الطاف حسین نے آخری وقت میں ہندو مذہب کیوں اختیار کیا،کرونا سے ڈر کر یا ہندووں کی محبت میں

دلچسپ و عجیب
11
دفنانے کیلئے کئی بار قبر کھودی گئی مگر اندر ایک کالاسانپ نکلا
15 7
وہ سربراہ جسے دفنانے کیلئے کئی بار قبر کھودی گئی مگر اندر ایک کالاسانپ نکلا
9 1
کرونا وائرس کی وبا کے دوران میاں بیوی ازدواجی تعلقات قائم رکھ سکتے ہیں ؟
20 8
دریا ’’نیل‘‘ کے نیچے زیر زمین کونسا دریا بہتا ہے
Copyright © 2017 insafnews.pk All Rights Reserved
About Us | Privacy Policy | Discaminer | Contact Us