10 7

وزیراعظم نے جیلوں میں قید خواتین کو سب سے بڑی خوشخبری سنا دی


اسلام آباد(آن لائن )وزیر اعظم عمران خان نے وزارت انسانی حقو ق کو ہدایت کی ہے کہ ملک بھر میں بند خواتین قیدیوں کو انکو ضلع کی کسی جیل میں رکھا جائے ،صحت ،سہولیات،بچوں کی دیکھ بھال اور نابالغ قیدیوں کے انسانی حقوق کاخاص خیال رکھا جائے،وزارت انسانی حقو ق کی رپورٹ کے م

طابق ملک بھر میں سینکڑوں خواتین قیدیوں کی تعداد جیل کی آبادی کا 1.5فیصد ہے ۔ ملک بھر کی جیلوںمیں 1211خواتین قیدی ہیں جن میں سے 195بچے،46بزرگ خواتین10نابالغ بھی شامل ہیں،300قیدی آبائی ضلع میں آباد ہیں،گزشتہ روز وزارت انسانی حقوق کی جانب سے وزیر اعظم عمران خان کہہ
دی جانیوالی رپورٹ میں انکشاف ہوا کہ ، رپورٹ میں زیر سماعت مقدمہ قیدیوں کے تناسب کو کم کرنے کی اہم ضرورت پر روشنی ڈالی گئی ہے۔ خواتین قیدیوں کے لئے سزا کے متبادل اور غیر حتمی اقدامات تیار کریں؛ نیز پورے ملک میں خواتین جیلوں اور بیرکوں میں رہائش اور تعلیم اور بحالی کے پروگراموں میں بہتری لانا،اس کے علاوہ ، اس نے جیل قوانین میں نظر ثانی ، انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں اور انسانیت سوز ضروریات کے انفرادی معاملات کا جائزہ لینے ، عملے کی تربیت ،

ذہنی صحت کے امور کا مقابلہ کرنے اور رہائی کے بعد کے پروگراموں کو تیار کرنے کی سفارش کی ہے ،کمیٹی کو موصولہ سرکاری اعداد و شمار سے پتہ چلتا ہے کہ پاکستان میں کل 73242 قیدیوں میں سے 1211 خواتین ہیں جو جیل کی آبادی کا 1.5 فیصد بنتی ہیں۔ پنجاب میں 727 خواتین قیدی ہیں ، سندھ میں 205 ، کے پی کے میں 166 ، بلوچستان میں 20 اور گلگت میں کل تین خواتین قیدی ہیں۔ پاکستان میں خواتین جیل کی کل آبادی کا 66.7 فیصد انڈر ٹرائل قیدیوں پر مشتمل ہے۔ مزید برآں ، کل 134 خواتین قیدی ہیں جن کے ساتھ بچے رہتے ہیں۔ جیلوں میں بچوں کی کل تعداد 195 ہے۔ یہاں 46 خواتین بزرگ شہری قیدی اور 10 خواتین نابالغ ہیں جن میں تقریبا 300 قیدی اپنے آبائی اضلاع سے قید ہیں۔ قریبی ڈی ایچ کیو کے ڈاکٹروں کے دورے کے علاوہ ان خواتین قیدیوں کی صحت اور تغذیہ کی ضروریات کو پورا کرنے کے لئے کل 24 خواتین میڈیکل ورکرز دستیاب ہیں،کمیٹی نے سوالناموں کے دو چکروں کے ذریعے بنیادی اعداد و شمار اکٹھا کر کے اور دستیاب تحقیق کا جامع لٹریچر جائزہ لیا۔ خواتین جیلوں کے علاج کے بین الاقوامی سطح پر تسلیم شدہ معیار کے مطابق صوبائی جیل کے قواعد کی پاسداری کا اندازہ کرنے کے لئے ، کمیٹی نے بینکاک رولز 2010 کو ایک معیاری رہنما خطوط کے طور پر استعمال کیا،واضع رہے کہ29 مئی 2020 کو ، وزیر اعظم عمران خان نے پاکستان کی جیلوں میں خواتین کی حالت زار کے مطالعہ اور ان کی تحقیقات کے لئے ایک کمیٹی تشکیل دی جس میں سیکریٹری وزارت انسانی حقوق (سکریٹری) ، سیکرٹری وزارت داخلہ ، پنجاب کے ہوم سیکرٹری ، سیکرٹری داخلہ ، خیبر پختونخوا کے سیکریٹری داخلہ ، سیکریٹری داخلہ گلگت بلتستان ، انسپکٹر جنرل جیل خانہ پنجاب ، انسپکٹر جنرل جیل خانہ جات سندھ ، انسپکٹر جنرل جیل خانہ خیبر پختون خوا ، انسپکٹر جنرل جیل خانہ جات بلوچستان ، انسپکٹر جنرل قید خانہ گلگت بلتستان ، بیرسٹر سارہ بلال (جسٹس پروجیکٹ پاکستان) ، اور حیا ایمان زاہد (لیگڈ سوسائٹی بھی شامل تھے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔



اس وقت سب سے زیادہ مقبول خبریں


تازہ ترین خبریں
16 8
پیپلز پارٹی کا (ق) لیگ کے حوالے سے بڑا فیصلہ
15 10
پہلا روزہ اور عید کب ہوگی
14 11
2023ء میں پاکستان کا وزیر اعظم کون ہوگا؟ بڑی پیشگوئی
13 12
تنخواہوں میں بڑے اضافے کی تیاریاں
12 11
(ن) لیگ کا بلدیاتی اداروں پر کنٹرول بحال
11 11
بلاول بھٹو کو وزیر اعظم بنوانے کی کوششیں تیز

تازہ ترین ویڈیو
23
امت مسلمہ کے ہیرو صلاح الدین ایوبی کے قول کے پیچھے چھپی سچی کہانی
27 2
یہ وہ جھوٹ ہے جوہر لڑکی ضرور بولتی ہے
2
کرونا وبا کب اور کیسے ختم ہو گی ؟ 1400 سال پہلے حضور اکرم ﷺ کی نشاندہی ، جان کر آپ پھولے نہ سمائیں گے
4 7
جھگڑالو بیوی نعمت خدا وندی مگر کیسے
3 9
کیسے لڑکیوں کو خواب دکھا کر تباہ کیا جاتا ہے ایک سچا واقعہ
52394
الطاف حسین نے آخری وقت میں ہندو مذہب کیوں اختیار کیا،کرونا سے ڈر کر یا ہندووں کی محبت میں

دلچسپ و عجیب
15 7
وہ سربراہ جسے دفنانے کیلئے کئی بار قبر کھودی گئی مگر اندر ایک کالاسانپ نکلا
9 1
کرونا وائرس کی وبا کے دوران میاں بیوی ازدواجی تعلقات قائم رکھ سکتے ہیں ؟
20 8
دریا ’’نیل‘‘ کے نیچے زیر زمین کونسا دریا بہتا ہے
Copyright © 2017 insafnews.pk All Rights Reserved
About Us | Privacy Policy | Discaminer | Contact Us