انشا ءاللہ وباء مئی اور جون کے درمیان ختم ہو جائے گی


اسلام آباد(مانیٹرنگ ڈیسک) ملک میں اس وقت کرونا کا زور تھا لہٰذا میں نے استاد کا دعویٰ پرکھنے کے لیے قرآن مجید اور احادیث میں کرونا کا علاج تلاش کرنا شروع کر دیا‘ سینئر کالم نگار جاوید چودھری اپنے کالم ’’نومبر تک ‘‘ میں لکھتے ہیں کہ قرآن مجید سے پتا چلا دنیا کی ہر مصیبت اللہ کی طرف سے آتی ہے اور وہی ذات یہ مصیبت ٹالتی ہے جب کہ مسند احمد میں وباؤں سے متعلق تین احادیث سامنے آ گئیں‘ یہ تینوں احادیث ان دنوں مختلف حلقوں میں زیر بحث تھیں‘ ماہرین فلکیات اور چند آسٹرولوجسٹ ان کو کرونا سے منسلک کر رہے ہیں‘ان کا خیال تھا نبی رسالتؐ نے چودہ سو سال پہلے فرما دیا تھا دنیا میں جب بھی کوئی وباآئے گی تو یہ موسم بہار کے آخر میں اس وقت ختم ہو جائے گی جب زمین میں بیج بونے کا وقت آئے گا۔ان احادیث کا تعلق پیور آسٹرونومی یعنی علم فلکیات سے تھا لہٰذا میں نے پہلے احادیث پڑھیں اور پھر آسٹرونومی کا مطالعہ کیاتو مجھے پتا چلا کرونا کا زور 18 مئی کے بعد ٹوٹ جائے گا اور جون میں اس کا کوئی ٹھوس حل سامنے آجائے گا یا پھر یہ وبا دن بدن کم ہوتے ہوتے ختم ہو جائے گی‘یہ کیسے ہوگا؟ میں یہ عرض کروں گا لیکن آپ پہلے وہ احادیث ملاحظہ کیجیے اور پھر میں ان احادیث میں چھپے ہوئے آسٹرونومی کے چند حقائق آپ کے سامنے رکھتا ہوں لیکن اس طرف جانے سے پہلے میں آپ کو یہ بھی بتاتا چلوں میں آسٹرولوجی یعنی علم نجوم کی بات نہیں کر رہا۔اسلام علم نجوم کو نہیں مانتا‘

ان احادیث کا تعلق آسٹرونومی یعنی فلکیات سے ہے اور اسلام نہ صرف علم فلکیات کو مانتا ہے بلکہ یہ علم ہمارے مذہب کا حصہ بھی ہے‘ ہم نمازوں کے اوقات بھی علم فلکیات سے طے کرتے ہیں‘ ہمارے مہینے بھی قمری ہیں اور قرآن مجید نے بار بار فلکیات سورج‘ چاند اور ستاروں کا ذکر بھی فرمایا۔ہم بہرحال احادیث کی طرف آتے ہیں‘ پہلی حدیث مسند احمد کی ہے‘حضرت عثمان بن عبداللہ بن سراقہ سے روایت ہے ”میں نے عبداللہ بن عمررضی اللہ تعالیٰ عنہ سے پھلوں کی فروخت کے بارے میں سوال کیا‘ آپؓ نے جواب دیا رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے آفت کا ڈر ختم ہونے تک پھلوں کی فروخت سے منع کیا تھا‘ میں نے کہا اور یہ کب ہوتا ہے یعنی آفت کب ختم ہوتی ہے تو انہوں نے جواب دیا جب ثریا ستارہ ظاہر ہوتا ہے۔دوسری حدیث بھی مسند احمد کی ہے‘ حضرت ابوہریرہ رضی اللہ تعالیٰ عنہ بیان کرتے ہیں رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا جب صبح کے وقت ثریا ستارہ طلوع ہوتا ہے اور اس وقت جو قوم جس بیماری میں مبتلا ہوتی ہے تو وہ بیماری یا تو سرے سے ختم ہو جاتی ہے یا اس میں کمی آ جاتی ہے اور تیسری حدیث بھی مسند احمد کی ہے‘ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا‘ جب ثریا ستارہ صبح کے وقت طلوع ہوتا ہے تو آفت ختم کر دی جاتی ہے۔آپ نے یہ تینوں احادیث ملاحظہ کیں تاہم ہمیں ماننا ہوگا علماء کرام ان کی تشریح پر تقسیم ہیں۔ایک گروپ کا خیال ہے یہ احادیث پھلوں کی وبا کی نشان دہی کرتی ہیں جب کہ دوسرے گروپ کا کہنا ہے ان کا مطلب ہر قسم کی وبا ہے‘یہ بحث ہزار سال سے جاری ہے‘ ہم بہرحال اس بحث میں نہیں پڑتے اور ثریا ستارہ کی طرف آتے ہیں‘انگریزی میں ثریا کو پلے ڈیز کہا جاتا ہے‘ یہ ستاروں کا کلسٹر یعنی جھرمٹ ہے‘ یہ

کلسٹر سیون سسٹرز بھی کہلاتا ہے اور ایم 45 بھی‘ آپ اگر مئی کے بعد آسمان پر شمال کی طرف دیکھیں تو آپ کو ستاروں کے اندر سات ستاروں کا جھرمٹ چھپاہوا نظر آئے گا۔یہ ستارے عموماً دھند میں لپٹے ہوتے ہیں اور ٹورس یعنی برج ثور کے اوپر ہوتے ہیں‘ عرب اسے پروین یا خوشہ پروین بھی کہتے تھے‘ یہ ستارے حجاز یا عرب علاقوں میں بہار کے آخر میں نظر آتے تھے‘ یہ کلسٹر ظہور اسلام سے پہلے جوں ہی نظر آتا تھا عرب زمینوں میں بیج بونا اور پھل توڑنا شروع کر دیتے تھے‘ عرب تاجر بھی ثریا یعنی پلے ڈیز دیکھنے کے بعد پھلوں کی تجارت شروع کردیتے تھے‘ سمندروں میں سفر کرنے والے بھی سردیوں کے بعد جب تک پلے ڈیز نہیں دیکھ لیتے تھے یہ شمال کی طرف سفرنہیں کرتے تھے۔میکسیکو میں آج بھی روایت ہے یہ لوگ پلے ڈیز دیکھنے کے بعد کاشت کاری شروع کرتے ہیں لہٰذا یہ ثریایا پلیڈیزکو سیڈ سٹارز(کاشت کاری کا ستارہ) بھی کہتے ہیں‘ آپ اگر سات ستاروں کے اس جھرمٹ یا کلسٹر کو دیکھنا چاہتے ہیں تو آپ عرب‘یورپ‘ امریکا اور لاطینی امریکا میں مئی کے آخر میں رات کے وقت اپنی چھت پر کھڑے ہو جائیں اور آسمان کی طرف دیکھیں‘ آپ گوگل پر جا کر بھی اس کے سارے اینگل دیکھ سکتے ہیں گویا نبی رسالت صلی اللہ علیہ وسلم کا فرمان تھا آسمان پر جب ستاروں کا یہ کلسٹر دکھائی دینے لگتا ہے تو زمین پر پھیلی وباؤں کا خاتمہ شروع ہو جاتا ہے لیکن میں ایک بار پھر عرض کر دوں پلے ڈیز کا تعلق علم نجوم سے نہیں ہے‘یہ علم فلکیات سے تغلق رکھتا ہے۔اسے صرف آسٹرونومسٹ مانتے ہیں اور ستاروں کا یہ کلسٹر صرف موسم کی تبدیلی کا اشارہ کرتا ہے جیسے چاند‘سورج اور قطب شمالی کرتا ہے اور بس۔اب سوال یہ ہے موجودہ حالات میں پلے ڈیز کب نظر آتا ہے‘ علم فلکیات کے مطابق یہ مختلف برسوں میں مختلف دنوں میں ظاہر ہوتا ہے مثلاً یہ 2020ء میں 18مئی کو نظر آنا شروع ہوگیا‘ یہ عرب‘ یورپ اور سنٹرل ایشیا میں 20 مئی کو نظر آیا لہٰذا ہم اگر احادیث کی روشنی میں دیکھیں تو کرونا کا زور 18مئی کے بعد ٹوٹنا شروع ہو گیا اور جوں جوں پلے ڈیز جون میں واضح ہوتا جائے گا وبا بھی ختم ہوتی چلی جائے گی تاہم ثریاستارہ لاطینی امریکا اور پیسفک اوشن کے ملکوں میں نومبر میں دکھائی دیتا ہے لہٰذا شاید وہاں کرونا نومبر میں ختم ہو۔ یہاں پر ایک اور سوال بھی پیدا ہوتا ہے کیا ہم ان احادیث اورپلے ڈیز کو سائنسی لحاظ سے ثابت کر سکتے ہیں؟جی ہاں!ہم کر سکتے ہیں‘ کیسے؟ پہلی بات علم فلکیات خالص سائنس ہے اور

پلے ڈیز یاثریا ستارہ اس سائنس کا حصہ ہے‘ پلے ڈیز یونانی لفظ ہے‘ یہ یونانیوں سے شرع ہوا تھا اور رومن تک نے اس کے اثرات کو تسلیم کیا تھا‘ کیوں؟ کیوں کہ اس کا تعلق زمین اور موسم کے ساتھ ہے‘ ستاروں کا یہ کلسٹر جوں ہی دکھائی دیتا ہے زمین کا اندرونی اور بیرونی دونوں درجہ حرارت بڑھ جاتے ہیں اور یوں زمین کے وائرس‘ بیکٹیریاز اور جراثیم مرنے لگتے ہیں اور یہ کھیتی باڑی کے قابل ہو جاتی ہے اور یوں شاید سردیوں میں جنم لینے والی وبائیں دم توڑنے لگتی ہیں۔آپ سٹڈی کر کے دیکھ لیں آپ یہ جان کر حیران رہ جائیں گے‘ ماضی کی دونوں وبائیں طاعون اور سپینش فلو بھی مئی اور جون میں ختم ہونا شروع ہوئی تھیں اور یہ پلے ڈیز کے ابھرنے کے ساتھ ساتھ دنیا سے غائب ہوگئی تھیں لہٰذاآپ ہمارے رسولؐ کی دانش ملاحظہ فرمائیے‘دنیا میں 2020ء میں 18مئی کو ثریا ستارہ طلوع ہوا اور اس کے ساتھ ہی 213 ملکوں میں کرونا کا زور ٹوٹ گیا‘ دنیا 18مئی کے بعد کھلنا شروع ہو گئی اور یہ ان شاء اللہ جون میں بڑی حد تک کھل جائے گی۔



اس وقت سب سے زیادہ مقبول خبریں


تازہ ترین خبریں
مارکیٹوں کو ہفتے میں 2 دن بند رکھنے اور شام 7 بجے بند کرنے کی پابندی ختم کرنے کا فیصلہ
پاکستان نے سعودی عرب سے بھی اہم مطالبہ کر دیا
پاکستان کی بڑی سفارتی کامیابی
معروف صحافی جاوید چودھری کا تہلکہ انگیز انکشاف
ہمیں اللہ سے زیادہ ایک ڈکٹیٹر کا خوف ہے ،جسٹس فائز عیسیٰ کے ریمارکس
56تنظیموں نے بھارت کے خلاف منظم مہم کا آغاز کر دیا

تازہ ترین ویڈیو
مجرب وظیفہ تسبیح سے بندشریانیں بھی کھل جائیں
عمران خان ہم ایک بدقسمت قوم ہیں،خلیل الرحمان
کورونا بیماری کے علاج کی سستی دوا دریافت
کرونا تحقیق میں نئی پیچیدگی کا انکشاف
کرونا وبا کب اور کیسے ختم ہو گی ؟ 1400 سال پہلے حضور اکرم ﷺ کی نشاندہی ، جان کر آپ پھولے نہ سمائیں گے
انشا ءاللہ وباء مئی اور جون کے درمیان ختم ہو جائے گی

دلچسپ و عجیب
کرونا وائرس کی وبا کے دوران میاں بیوی ازدواجی تعلقات قائم رکھ سکتے ہیں ؟
کورونا وائرس کے ذریعے پوری دنیا میں کرفیو
دریا ’’نیل‘‘ کے نیچے زیر زمین کونسا دریا بہتا ہے
جو ں جوں وقت گزرتا جاتا ہے تو پتہ چلتا ہے کہ جو اللہ اوراس کے رسول نے کہا وہی درست ہے
سیاستدان سیاست میں آنے سے پہلے کیا کیا کرتے تھے
کرونا وائرس ,احتیاطوں کے ساتھ یہ تسبیحات روز کی جائیں، انتہائی مفید معلومات
پنڈتوں نے کورونا وائرس سے بھگوان کو بچانے کے لیے اُن کو ماسک پہنا دیا
ہم سب کے موبائل فون ”میرا جسم تیری مرضی“ سے لبالب
Copyright © 2017 insafnews.pk All Rights Reserved
About Us | Privacy Policy | Discaminer | Contact Us
EnglishUrdu